Advice from Ayatullah Sayyid Ali al-Sistani (dz) to the Believing Youth.

 In Uncategorized

The Request:

“In the Name of God, the Beneficent, the Merciful. 

“The Best of greetings to the highest Religious Authority, His Eminence, Grand Ayatullah al-Sayyid Ali al-Husseini al-Sistani. 


“We are a group of young college students and social activists. We would like to ask Your Eminence for advice that can be useful to us in this day and age, describing the role of the youth and what is required of them to play that role. Other advice that would be beneficial to the youth is also appreciated.


 A group of college students and social activists”

The Response:

In the Name of God, the Beneficent, the Merciful

All praise belongs to God, Lord of the worlds, and may peace and blessings be upon Muhammad and his pure progeny.

Peace be upon you, and the mercy of God, as well as His blessings.

I would like to give to the dear youth –whom I care about as much as I care about myself and my family- eight precepts that can provide them with happiness in this world and the Hereafter. They are the essence of the message of God, the Glorified, to His creation. They are also the advice of God’s wise and pious servants and what I have extracted from experience and knowledge:

First: It is necessary to truly believe in God, the Glorified, and in the Hereafter. Never neglect this belief. It is proven by clear evidence and decreed by the straight path. Every creature in this world –if man can explore its depths– is a novel production that attests to an omnipotent maker and a mighty creator. The messages of God have come incessantly through His Prophets to remind mankind of this fact and to indicate that this life –as He planned it- is in fact an arena in which He tests His servants to see who is best in conduct. A person who is blind to the existence of God and the Hereafter would not know the meaning of this life, its horizons, and its aftermath, and would be walking in darkness. Therefore, maintain your belief and make it the most important and the most precious of your belongings. Try to increase your certainty of it, make it present with you at all times, and preserve it with strong foresight and penetrating vision.

If you find a weakness in your faith at a moment of vigorous youth, such as when feeling burdened by a religious obligation or fancying an impermissible pleasure, then do not completely sever your relationship with God, the Exalted, because that will make it harder for you to return. One may refuse obeying God’s commands at times of health and strength, yet he will be forced to go back to his Lord at times of weakness and disability. Therefore, remember at the time of vigor –which is a very short period- the times of weakness, decay, ailment, and aging.

Never question the proven principles in order to justify your wrong conduct and behavior, follow doubts you do not have the patience to research and disprove, give way to immature thoughts, be allured by life’s pleasures and vanity, or resent the exploitation of religion by some for their personal interest. Rightfulness is not measured by men. Instead, men are measured by rightfulness.

Second: Have good morals, such as wisdom, consideration, kindness, modesty, frugality, prudence, patience, etc. They are the main causes of happiness in this world and the Hereafter. The closest of the people to God, the Glorified, and the one with deeds that weigh heavy on the scale is the one with the best morals. Therefore, improve your conduct with your parents, family, children, friends, and all people. If you find deficiencies in yourself, do not overlook them. Hold yourself accountable and carry yourself with prudence toward good morals. If you find yourself unable to behave morally, then do not lose hope. Pretend to have high morals. You will be rewarded more than a person who is naturally good-mannered.

Third: Try to learn a trade and acquire a specialty, and exhaust yourself in that pursuit. There are many blessings in this; it occupies a portion of your free time, you can support yourself and your family, benefit society, do good deeds using the money you earn, sharpen your mind, broaden your experience, and your wealth becomes more blessed. That is because the harder wealth is earned, the more blessed and pleasant it is. Furthermore, God, the Exalted and Immaculate, loves the hardworking person who exhausts himself with work and trade, and dislikes the idle person who is dependent on others and spends his time in play and diversion. Do not waste your youth without learning a trade or specialty. God, the Glorified, has put in youth bodily and spiritual energies so that a person can acquire skills he can use for the rest of his life. Do not waste it in play and negligence.

Attend to your vocation and specialty until you become proficient in it. Do not speak without knowledge, and do not practice without experience. If you do not know or cannot do something, acknowledge your deficiency and apologize to your clients or customers, or refer them to those more experienced than you are. This increases your credibility in their eyes. Do your work with interest, attention, and enjoyment; do not make it your goal to just collect money even from impermissible sources. There is no blessing in forbidden wealth. A person who acquires wealth from impermissible sources is prone to adversity sent to him by God that will make him part with that money on top of his affliction and toil. Such wealth does not make one rich in this life, and becomes a curse in the afterlife.

Make yourself the scale with which you measure your conduct with others. Do to others what you do to yourself and what you would have them do to you. Be kind to people as you would like God, the Glorified, to be kind to you. Maintain your profession’s ethics and conventions, and do not use inferior ways that you would be ashamed to declare. Keep in mind that the worker and the specialist have a duty toward the customers and clients who put their trust in them. Be a counselor to them, and never deceive them. That is because God, the Glorified, watches you and knows about your deeds, and He will punish you sooner or later, for cheating and betrayal are the most disgraceful of deeds and have the severest of results and consequences.

Let physicians in particular follow this advice more strictly because they deal with people’s bodies and minds. Therefore, let them not disobey the above advice, or they will face severe consequences.

God, the Glorified and Exalted, says, “Woe to the defrauders who use short measures, who, when they measure [a commodity bought] from the people, take the full measure, but diminish when they measure or weigh for them. Do they not know that they will be resurrected?” (83:1-4). Furthermore, the Prophet, may God’s blessings be upon him and his progeny, said, “God likes if you do a job, to do it excellently.”

Also, let college students and professors seek to encompass whatever is related to their field of specialty that comes from institutes of science, especially the science of medicine, in order for their knowledge and treatment to be on the cutting edge of contemporary science. Moreover, they should pay attention to advancing science themselves through useful scientific articles and pioneering discoveries, thereby rivaling other institutes of science as much as they can. They should disdain being mere students of others and mere consumers of the tools and equipment others make. Instead, they should actively contribute to advancing science, just as their ancestors were pioneers and leaders of science in previous times. No generation is worthier than another one. Therefore, you should nurture the young who have distinctive abilities, who possess genius, and who exhibit intelligence and excellence, even if they are from the lower classes. Support them as you support your children, so they may reach the high levels of beneficial knowledge. You will get rewarded for all they produce, and your society and offspring will benefit from them.

Fourth: Engage in good deeds and morals and abstain from bad ones. Prosperity and abundance arise from virtue, and misery and evil –except those sent by God to examine His servants- arise from vice. God, the Glorified, says, “Whatever affliction that may visit you is because of what your hands have earned, and He excuses many [an offence]” (42:30).

Virtuous deeds include holding oneself responsible, chastity in appearance, eyesight, and behavior, sincerity, maintaining the bonds of kinship, returning the consignment, fulfilling commitments and obligations, resolve in righteousness, and disdaining vile conduct and behavior.

Vicious deeds include abhorred tribalism, being easily enraged, impermissible entertainment, showing off to people, extravagance at times of wealth, aggression at times of poverty, grumbling at times of adversity, doing evil to others particularly the weak, wasting of money, ingratitude to abundance, conceit in sin, assisting in injustice and aggression, and loving to be thanked for a deed one did not do.

I want to stress the issue of chastity with regard to young unmarried women, because women are more affected by the consequences of neglecting it due to their delicateness. Thus, let them not be deceived by superficial emotions, and not enter casual relationships whose enjoyment ends quickly and what stays is their complications and consequences. Young unmarried women should only think about a stable life that contains the elements of loyalty and happiness. There is no more dignified woman than one who maintains her composure and strength, who is reserved in her appearance and behavior, and who busies her time with her life, work, and school.

Fifth: Try to start a family by getting married and procreating without any delay. Having a family is a source of pleasure and affability, a motive for hard work, a cause for sobriety and being responsible, an investment of energy for the future, and a defense against forbidden and lowly deeds. It has been narrated that one who gets married has attained half of his religion. Foremost, marriage is a necessary course of life and a natural human instinct. Those who abandon it fall into trouble and are inflicted with dullness and laziness. Do not be afraid of being impoverished by marriage, because God, the Glorified, has put many causes of abundance in marriage that one may not be aware of at first. Also, pay attention to the character of the woman you want to marry, and to her piety and discipline, and do not be occupied with evaluating her beauty, her appearance, and her job, because those traits are a veil that may be removed when life reveals its hardships. There are warnings in the Hadith against marrying a woman merely for her looks. Moreover, one who marries a woman for her piety and character will have a blessed marriage.

Let young unmarried women and their guardians not favor getting a job over starting a family, because marriage is a necessary course of life, while a job is more of a complement to it. It is not wise to abandon the former for the sake of the latter. Those who do not understand this principle will regret it later in life when regret is of no use. Life’s experiences attest to this.

Guardians are not permitted to prevent their daughters from getting married, nor are they permitted to put obstacles in their way using improper traditions not required by God, such as asking for exorbitant dowers or waiting for cousins and sayyids, because there are many sources of corruption in these traditions. God made fathers the custodians of their daughters only so that they counsel their daughters and choose the best option for them. One who confines a woman for other than her interest has committed a sin that endures as long as her suffering, and has opened one of Hell’s doors upon himself.

Sixth: Seek charity and helping people, particularly orphans, widows, and the disadvantaged, and always observe the public interest. Such practices enhance your faith, discipline your soul, and purify your wealth and abundance. They also entail proposing virtue, cooperation in piety and God-fearfulness, silently enjoining good and forbidding evil, an assistance to the authorities in keeping order and protecting the public interest, and a cause for a better society. They are a blessing in this world, and a balance in the Afterlife. God, the Glorified, loves a community that lives in solidarity and cooperation, in which everyone cares about the interests of others as he cares about his own interest.

God says, “If the people of the towns had been faithful and maintained piety, We would have opened to them blessings from the heaven” (7:96), and says, “Allah does not change the condition of a nation, unless it changes what is in it heart…” (13:11) The Prophet, may God’s blessings be upon him and his progeny, said, “One of you does not become a believer until he likes for his brother what he likes for himself and dislikes for his brother what he dislikes for himself,” and also said, “One who establishes a good tradition gets rewarded for it, and gets rewarded for those who follow that tradition.”

Seventh: Attend to the responsibilities you have assumed, whether in family or in society. Let fathers attend to their children, and husbands attend to their wives. Abstain from violence and cruelty even when there is a need for strictness in order to preserve the family and society. The methods of strictness are not limited to bodily injury and distasteful remarks. There are other means and approaches of discipline that can be learned from experts and specialists. Indeed, cruel measures oftentimes result in the opposite of what is intended. They cause the bad condition to take deeper roots and break the person they are supposed to adjust. There is no good in strictness that causes injustice, and a mistake cannot be remedied with a sin.

Let those who assume responsibilities in society attend to their responsibilities. Let them be counselors to society and not betray it, for God is the custodian of everybody and He will call them to account on the Day of Resurrection. Therefore, do not spend public money wastefully, do not make decisions that harm the public, and do not exploit your position to establish a class of people who cover up for each other, do not help each other to forbidden interests and dubious monies, remove others from positions they deserve, or deny them services they have a right to. Treat all people equally. Do not use your public job as a means to fulfill private obligations such as kinship, past favors, etc., because fulfilling private obligations with public funds is injustice and corruption. If you ever have the option to choose one over an equally qualified other, then choose the weaker one who has no sponsor and no supporter except God, the Glorified. Let nobody take religion or sect into consideration when working for the public, for the true religion is based on the true principles of justice, doing good, honesty, etc. God says, “Certainly We sent our apostles with manifest proofs, and We sent down with them the Book and the Balance, so that mankind may maintain justice” (57:25). Also, the Imam, may peace be upon him, said, “I heard the Prophet of God, may God’s blessings be upon him and his progeny, say on various occasions, ‘A nation in which the weak cannot take back his property from the strong without stuttering will not be sanctified.’” Anyone who does not follow this principle would be deceiving himself with false wishes and false hopes. The true followers of just leaders such as the Prophet, may God’s blessings be upon him and his progeny, Imam Ali, may peace be upon him, and the Martyr Imam al-Husayn, may peace be upon him, are those who follow their teachings and emulate their conduct. Let those who assume public responsibilities read the letter of Imam Ali, may peace be upon him, to Malik al-Ashter upon sending him to Egypt. That letter is a full description of the principles of justice and fidelity. It is very beneficial to governors and even people with lesser responsibilities. However, the bigger one’s responsibility is, the more useful reading this letter will be to him.

Eighth: Have a spirit of learning and an interest in increasing your knowledge and wisdom in all stages of your life and in all conditions. Reflect on your deeds and traits and their effects, and ponder the incidents that happen around you and their results, so that you become more knowledgeable and experienced every day, for there is a lesson and guidance in every act or incident, and there is a message and meaning in every happening. Every occurrence reveals courses and phenomena, and represents examples and lessons to those who pore over it. Therefore, never neglect supplying yourself with more knowledge and experience until the last day of your life. The more knowledgeable a person is, the more trials and errors he will avoid. God, the Glorified, says, “And he who is given wisdom, is certainly given an abundant good” (2:269), and He says to His Prophet, may God’s blessings be upon him and his progeny, “And say, ‘My Lord! Increase me in knowledge.’” (20:114)

Moreover, one should acquaint himself with three books, contemplating and reflecting on his readings from them:

First and foremost is the Qur’an. It is the last message of God to His creation. He sent this message to sharpen the minds and make streams of wisdom spring from them, and also mellow the rigid hearts. He narrated stories in it as examples to its readers. One should not abandon reading this book to himself, thereby making his soul feel God is talking to him. That is because God, the Exalted, sent this book as a message to the world.

The second is Nahj al-Balaghah. This book explains the meanings of the Qur’an in an eloquent style that provokes a spirit of reflection, contemplation, learning, and wisdom. Therefore, one should read it whenever he has a chance, and imagine that Imam Ali, may peace be upon him, is addressing him directly. Also, one should pay special attention to the letter of Imam Ali, may peace be upon him, to his son, Imam al-Hasan, may peace be upon him.

The third is al-Sahifah al-Sajjadiyah. It contains eloquent supplications whose meanings are extracted from the Qur’an. There are teachings in those supplications about how one’s orientation, obsession, vision, and ambition should be. They also teach one how to call himself to account and how to scrutinize and criticize himself, particularly the supplication of Makarim al-Akhlaq (Noble Moral Traits).

These eight commandments are the foundation for steadfastness in life. However, I have written them only as a reminder. They are obvious because one can see them in the light of righteousness, the brilliance of truth, the purity of innateness, the proof of reason, and the experience of life. Also, divine messages and the instructions of the enlightened have stressed them. Therefore, everyone should follow them, particularly the youth, who are in the peak of their energy and their bodily and spiritual abilities. Even if they do not follow all of them, let them know that taking a little is better than abandoning the lot, and obtaining a part is better than losing the whole. God, the Glorified, says, “So whoever does an atom’s weight of good will see it, and whoever does an atom’s weight of evil will see it.” (99:7-8)

I ask God to help you to achieve happiness and righteousness in this life and the Afterlife, as He is the Lord of Success.

آقای سیستانی دام عزہ کی طرف سے جوانوں کو نصیحت

آقای سیستانی دام عزہ کی طرف سے جوانوں کو نصیحت

بسم اللہ الرحمن الرحیم

ہم  کچھ اسٹوڈینٹ اور جامعہ میں مصروف خدمات جوان ہیں ، آپ سے تقاضا کرتے ہیں کہ کچھ ایسی نصیحت فرمایں کہ جو آج کے زمانے کے لحاظ سے ہمارے لیۓ مفید واقع ہو، اور جو چیزیں  جوانوں کیلیۓ آپ کی نظر میں مفید ہوں وہ بھی بیان فرمایں۔

اسٹوڈینٹ اور جامعه میں مشغول خدمات افراد کا ایک گروه

 *****

 بسم اللہ الرحمن الرحیم

الحمد للہ رب العالمین و الصلاۃ والسلام علی محمد وآلہ الطاھرین

سلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ  جوانان عزیز جو میرے لیۓ، خود اپنی طرح اور اپنے بچوں کیطرح اہمیت رکھتے ہیں، آپ کو آٹھ  با توں کی نصیحت کرتا ہوں، یہ وہ نصیحتیں ہیں کہ جس میں دنیا وآخرت کی تمام خوبیاں چھپی ہویٔی ہیں ۔

 ۱۔ خداوند متعال اور آخرت پے صحیح اعتقاد رکھنا:

 پس  ان اعتقاد حقہ پر دلایل واضح و روشن ہونے کے باوجود آپ میں سے ہرگزکویی کوتاہی نہ کرے، اگر انسان غور کرے تو اس بات کا اعتراف کرے گا کہ اس دنیا کی ہر مخلوق بے نقص ہے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ اس کا بنانے والا ایک قادر مطلق ہے، اور ہمیشہ خدا وند متعال نے اپنے پیغمبروں کے ذریعے اس بات کو اپنے بندوں تک پہونچایا ہے، اور ہمارے لیۓ واضح کیا ہیکہ یہ زندگی حقیقت میں بندوں کی آزمایش اور امتحان کیلیۓ بنایٔی گیٔی ہے جس میں پتا چلتا ہیکہ کون بہترعمل بجا لانے والا ہے ، پس جس کیلیٔے خدا کا وجود اور آخرت پوشیدہ ہے اور اس پے ایمان نہیں رکھتا ہے، تو اس کی عاقبت اس کی نظر سے پنہان ہے اور زندگی کا راستہ اس کیلیٔے تاریک ہو چکا ہے، اس لیٔے آپ میں سے ہر ایک کا وظیفہ ہے کہ اپنے اس صحیح عقیدے کی حفاظت کرے اور اس کو اپنے لیٔے محبوب ترین شیٔ سمجھے ، بلکہ کوشش کرے کہ اس کے یقین میں روز بروز اضافہ ہو یہاں تک اس کے وجود میں سما جاۓ ۔

اور اگر انسان جوانی کے ایام میں اپنے اندر دین کے مسایٔل میں کویٔی کمزوری دیکھ رہا ہے جیسے اپنے وظایٔف دینی کو انجام دینے میں سستی کر رہا ہو، اور دنیوی لذتوں کی طرف زیادہ راغب ہو تو ہرگز اپنے رابطے کو خدا وند متعال سے قطع نہ کرے کہ مبادا پلٹنے کا راستہ اس کیلیٔے دشوار ہو جاۓ ، اور یہ بھی جان لے انسان اگر بدن میں طاقت اورعافیت ہونے کی وجہ سے اس کا دھوکا کھاۓ اور خدا وند کے دستورات کو اہمیت نہ دے اور روی گردان ہو تو ضعف اور کمزوری کے وقت خدا وند کی طرف رجوع کرنے کے علاوہ اور کویٔی چارہ نہ ہوگا ، اس لۓ جوانی کے آغاز سے ہی جو ایک محدود زمانہ ہے اپنے ضعیفی اور نا توانی کے ایام کی فکر میں ہو۩ویٔی چارہ نہ ہوگا ، اس لۓ جوانی کے آغاز سے ہی جو ایک محدود زمانہ ہے اپنے ضعیفی اور نا توانی کے ایام کی فکر میں ہو۔

 ہرگز ایسا نہ ہو کہ اپنے غلط کردار اور اعمال کو موجہ کرنے کیلیٔے دوچار لغزش ہو اور دین کہ مسایٔل میں شک و شبہ وارد کرے اور دوسروں کے شبہات کو قبول کرے، یا ہمیشہ خام فکروں پر اعتماد کرتے ہوۓ دھوکا کھاۓ یا دنیا کی لذات اور زرق و برق اسے فریب دے دیں ، اور اسی طرح وہ لوگ بہی اس کیلیۓ دین میں سستی کا باعث نہ بنیں جو دین کے نام پر اپنے دنیوی اغراض کے پیچھے ہیں، کیونکہ حق انسانوں سے پہچانا نہیں جاتا بلکہ لوگ حق کے میزان پے تولے جاتے ہیں۔

 ۲۔ نیک اخلاق سے آراستہ ہونا:

 بیشک نیک اخلاق بہت سے فضایٔل اخلاقی جیسے حکمت، بردباری ، مروت ، تواضع ، تدبیرِ، صبر، شکیبایٔی وغیرہ کو شامل کرتا ہے، اسلیٔے اسکا شمار دنیا اور آخرت کے مہم ترین اسباب سعادت میں سے ہوتا ہے، اور جس دن نامہ اعمال کا ترازو سبک ہوگا اس دن اس کے اعمال کا پلہ سب سے سنگین ہوگا جو نیک اخلاق رکھتا ہو ، اسلیٔے آپ میں سے ہر ایک اپنے اخلاق کو اپنے گھر والوں ، رشتہ دار ، دوست احباب اور عام افراد سے اچھا رکھے ، پس اگر اپنے نفس میں کچھ کمی دکھے تو اسے نادیدہ نہ سمجھے بلکہ اپنے نفس کا محاسبہ کرتا رہے اور حکمت اور تدبیر سے اس کو مہار کرتے ہوۓ اپنے حقیقی مقصد کی طرف اس کو ہدایت کرے، اور اگر نفس نے طغیان کیا بھی تو نا امید نہ ہو بلکہ خود کو نیک اخلاق سے آراستہ کرنے کی کوشش کرتا رہے کہ بیشک جو دوسروں کے اخلاق کی پیروی کرے ان میں سے شمار ہوگا اور خدا وند متعال کی نظر میں اچھے اخلاق سے آراستہ ہونے کی کوشش کا اجر اس شخص سے زیادہ جس کے اندر ذاتی طور پے نیک اخلاق پایا جاتا ہوکو۔

 ۳۔ کسی بھی حلال فن اور مہارت کو سیکھنے کیلیۓ کوشش اور تلاش کرنا اور خود کو زحمت اور سختی میں ڈالنا:

 کیونکہ اس میں بہت سی برکات ہیں اس لیۓ کہ انسان کے وقت گذرنے کا سبب  بھی ہے اور اپنے اہل و عیال کیلیٔے روزی کمانے کا ذریعہ بھی، اور اپنے سماج کیلیٔے بھی مفید واقع ہوگا، اس سے نیک کاموں کیلیٔے مدد حاصل کر سکتے ہیں اور ایسے تجربے جس سے فکر اور مہارت میں پختگی ہو، حاصل کریں کیونکہ جتنی ہی زحمت سے روزی حاصل کرینگے اتنی ہی خیرو برکت زیادہ ہوگی ،جیسا کہ خداوند متعال اس انسان کو جو رزق و روزی حاصل کرنے کیلیٔے اپنے کو زحمت میں ڈالتا ہے دوست رکھتا ہے اور ایسے انسان سے جو بیکار اور بے فایٔدہ ہو اور اپنے وقت کو بے وجہ اور خوشگذرانی میں تلف کرتا ہے بیزار ہے، پس توجہ رہے کہ آپ کی جوانی بغیر کسی کام کی مہارت  حاصل کیٔے بغیر گذر نہ جاۓ، کیونکہ خدا وند متعال نے جوانی میں جسمی اور اندرونی طاقتوں کو قرار دیا ہے تاکہ انسان اس کے ذریعے زندگی کا سر مایا حاصل کر سکے، پس ہرگز اس کو خوش گذرانی اور بے توجہی میں ضایع نہ کریں۔

 اور آپ میں سے ہر ایک کسی نہ کسی کام میں مہارت حاصل کرے اور بغیر مہارت کے کہ کسی مسألہ میں نظر نہ دے اور کسی کام کو بغیر مہارت کے انجام نہ دے ، بلکہ ایسے موارد میں جہاں لازم مقدار میں مھارت نہ ہو عذرخواہی کرلے ، یا ایسے شخص کی طرف جو لازم مقدار میں مہارت رکھتا ہے راہنمایٔی کر دے کیونکہ یہ کام اس کے لیۓ مفید ہے اور اس سے دوسروں کا اعتماد اس پر اور بڑھے گا ،اوراپنا کام ہمت اور حوصلے سے بہتر سے بہتر طریقے سے رغبت کے ساتھ انجام دے ، اور اس کا تمام ہم وغم مال اکٹھا کرنے میں نہ و لو یہ کہ حرام طریقے سے ہی کیوں نہ ہو، چہ بسا خدا وند متعال ایسی بلا میں مبتلاء کرے کہ وہی مال مزید رنج و زحمت کے ساتھ خرچ کرنا پڑے اور کچھ حاصل بھی نہ ہو، ایسا مال اس دنیا میں انسان کو بے نیاز نہیں کرے گا اور آخرت میں وزر و وبال بن جاۓ گا۔

 آپ میں سے ہر ایک اپنے ضمیر کو خود اور دوسروں کے درمیان میزان قرار دے، پس دوسروں کیلیۓ اسی طرح کام کرے جس طرح خود کیلیۓ کرتا ہے، اور پسند کرتا ہے کہ دوسرے اسکے لیۓ انجام دیں ، اور دوسروں کے ساتھ نیکی کرے اسی طرح جس طرح پسند کرتا ہے کہ خدا وند سبحان اس کے ساتھ نیکی کرےاور اپنے پیشے کے اخلاقی موازین اور شایستگیوں کی رعایت کرے، پس ایسی پست روشوں کا سہارا نہ لےجس کہ بیان کرنے سے شرم کرتا ہو، اور یہ جان لے کہ کام کرنے والا اور اسپسلیسٹ، مدیر اور رجوع کرنے والوں کی طرف سے کام پرامانت دار ہے، پس  چاہیٔے کہ اس کا خیر خواہ ہو، اور جس مورد میں آگاہی نہیں رکھتا اس کے ساتھ خیانت کرنے سے پرہیز کرے، کیونکہ خداوند متعال اس کے کام پر نظارت رکھتا ہے دیر یا جلدی اس کے حق کو اس سے وصول لیگا، بیشک خیانت اور دھوکا خدا وند کے نزدیک  بدتریں کام ہے، اور آثار اور عواقب بد  کے لحاظ سے خطرناک ترین کاموں میں سے ہے۔

 مختلف پیشوں میں سے ڈاکٹر حضرات ان نصیحتوں پر زیادہ توجہ رکھیں، کیونکہ ان کا سروکار لوگوں کی جان اور جسم سے ہے، پس جو موارد ذکر ہوۓ ہیں ان کے رعایت نہ کرنے پرشدت سے ڈریں، کیونکہ عاقبت کی بربادی کا سبب بنے گا، بیشک قیامت کا دن اس کیلیٔےجو اسے دیکھ رہا ہو نزدیک ہے۔

 خدا وند سبحان فرماتا ہے: ( وَيْلٌ لِلْمُطَفِّفِينَ (1) الَّذِينَ إِذَا اكْتَالُوا عَلَى النَّاسِ يَسْتَوْفُونَ (2) وَإِذَا كَالُوهُمْ أَوْ وَزَنُوهُمْ يُخْسِرُونَ (3) أَلَا يَظُنُّ أُولَئِكَ أَنَّهُمْ مَبْعُوثُونَ (4) ۔ (( وای ہو کم بیچنے والوں پر (۱) وہ لوگ جو دوسروں سے کویٔی چیز لیتے ہیں تو ترازو کو پورا کرکے لیتے ہیں (۲) وہ لوگ جو لوگوں کیلیٔے کویٔی چیز ناپتے یا تولتے ہیں تو کم کرتے ہیں (۳) آیا وہ لوگ گمان نہیں کرتے کہ ایک دن اٹھاۓ جایں گے(۴) )) اور پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ وآلہ) سے روایت ہیکہ : (إنّ الله تعالى يحبّ إذا عمل أحدكم عملاً أن يتقنه)خدا وند متعال دوست رکھتا ہے کہ تم میں سے جب کویٔی کسی کام کو انجام دے تو اس کو بہترین طریقے سے انجام دے)۔

 کالجوں کے اسٹوڈینٹ اور ٹیچر حضرات اپنی مہارت کے بارے میں ضروری ہے کہ دوسرے علمی مراکز کی جو دست آورد ہے اسے بھی اہمیت دیں، بالخصوص علم طب تاکہ ان کا علم زمانے کے علم کے ہم سطح ہو، بلکہ موظف ہیں کہ علمی اور سود مند جدید اکتشافات والے مقالوں پر رجوع کر کے اپنی سطح علمی کو آگے بڑھایں، اور جو اسباب ان کیلیٔے فراہم ہیں ان پر توجہ رکھتے ہوۓ دوسرے علمی مراکز سے کمپٹیشن میں رہیں اور اپنے کو اجازت نہ دیں کہ علوم کے حاصل کرنے میں صرف دوسروں کے شاگرد رہیں اور دوسروں کے بناۓ ہوۓ وسایل سے صرف استفادہ کرنے والوں مین سے ہوں، بلکہ ضروری ہے کہ علم اور فن ایجاد کرنے اوراس سے فایٔدہ اٹھانے میں آپ بھی شریک اور کوشا ہوں،جیسا کے گذشتہ میں بھی ان کے اجداد ان کے رہبر اور آگے رہنے والے افراد میں سے تھے،اور اس امر میں کویٔی بھی امت دوسری امت پر برتری نہیں رکھتی اور خاص استعداد اور نبوغ جو بعض نوجوان اور جوانوں میں پایا جاتا ہے اور انکا ہوشمند اور ذہین ہونا واضح ہے، ایسے افراد کی ہمایت اور پشتیبانی کریں، گر چہ ایک غریب طبقے سے ہی کیوں نہ ہوں اور بلند اور سودند درجہ علمی تک پہونچنے میں انکی مدد کریں، جس طرح سے اپنے بچوں کی مدد کرتے ہیں تاکہ ان کے کام کے مثل آپ کیلیٔے بھی اجر لکھا جاۓ اور جامعہ اور آیندہ آنے والے افراد انکے علم سے فایٔدہ اٹھایں۔     

۴۔ نیک اور پسندیدہ اخلاق پر پا بند رہنا اور ناپسند اخلاق و رفتار سے اجتناب کرنا:

کیونکہ کوییٔ بھی نیکی اور سعادت نہیں ہے مگر یہ کہ اس کی بنیاد فضیلت ہے اور کویٔی برایٔی اور شقاوت نہیں ہے مگر یہ کہ اس کا منشأ پستی ہے، مگر وہ موارد کہ جہاں پر خود خدا وند اپنے بندے کا امتحان لینا چاہتا ہو جیسا کہ خدا وند متعال نے فرمایا : ( وما اصابکم من مصیبۃ فبما کسبت ایدیکم ویعفو عن کثیر ) ۔ ((ہر وہ مصیبت جو تم پر آتی ہے خود کے اعمال کا نتیجہ ہے اور [ خدا ] بہت سے چیزوں سے گذشت کرتا ہے))

 بعض پسندیدہ صفات مندرجہ ذیل ہیں : محاسبہ نفس، ظاہر اور نگاہ و رفتارمیں پاکدامنی ، گفتار میں صداقت ، صلہ رحم ، امانت داری، عہد و پیمان کے بنسبت وفاداری، حق پر گامزن رہنا اور پست اور بیہودہ رفتار و کردار سے دوری کرنا ۔

بعض  نا پسندیدہ  صفات مندرجہ ذیل ہیں: غلط تعصبیت ، غیر سنجیدہ عکس العمل، پست تفریحیں، لوگوں کے مقابل میں خود نمایٔی کرنا، وسعت ملنے پر اسراف ، تنگدستی میں دوسروں کہ حق پر تجاوز، مصیبت اور بلاء کے وقت نا رضایتی کا اظہار، دوسروں سے بد رفتاری سے پیش آنا بالخصوص کمزور افراد کے بنسبت، اموال کو ضایع کرنا ، کفران نعمت ، گناہ کرنے پر اصرار کرنا، گناہ پر مدد کرنا اور جو کام انجام نہ دیا ہے اس پر تعریف ہونے کا شوق رکھنا ۔

اور لڑکیوں کو پاکدامنی کی خاص تاکید کرتا ہوں ، کیونکہ عورت اپنی لطافت کی بنیاد پر زیادہ مورد آذار و اذیت ۔ جس کا منشأ بے احتیاطی نسبت بہ عفت  ہوا کرتی ہے۔  قرار پاتی ہے، پس متوجہ رہیں کے بناوٹی احساسات کا دھوکھا نہ کھایں اور جلد گذرجانے والے تعلقات قایٔم نہ کریں کہ جس کی لذت گذرا ہے  لیکن نا گوار اثرات باقی رہ جاتے ہیں ، پس سزاوار نہیں ہے کہ لڑکیاں جز اپنی پایدار زندگی کے علاوہ جو انکی سعادت اور خوشبختی کا باعث ہے فکر کریں ، اور کتنی با وقار ہے وہ خاتون جو رفتار اور کردار میں با حشمت ہے اور متانت کہ ساتھ اپنے زندگی کے امور اور تعلیم حاصل کرنے  میں مصروف ہے۔

 ۵۔ بغیر تاخیر کے اشتراکی زندگی کو تشکیل دینے کو اہمیت دینا ازدواج اور بچہ داری  کے ذریعے:

کیونکہ اشتراکی زندگی انسان کیلیٔے باعث انس اور لذت ہے جو سبب ہے کہ انسان تلاش کے ساتھ اپنے کام کو انجام دے اور با وقار اور مسٔولیت کے ساتھ  زندگی گذارے اور نیاز کے وقت اپنی خدا دادی طاقت سے فایدہ اٹھاۓ، یہ تمام چیزیں باعث ہوتی ہیں کہ انسان بہت سے نا مشروع کام سے دور رہے ، یہاں تک کہ حدیث میں آیا ہے کہ جس نے شادی کی اس نے اپنے نصف دین کو محفوظ کر لیا اور تمام گذشتہ موارد میں اشتراکی زندگی کا تشکیل پانا ایک اہم سنت ہے جس کیلیٔے خاص سفارش کی گیٔی ہے، اور یہ ایک فطری غریزہ ہے کہ سرشت انسان اس پر رکھی گیٔی ہے، اور کویٔی ایسا نہیں ہے کہ اس سنت سے خوداری کرے مگر یہ کہ مشکلات میں گرفتار ہو یا سستی اور کاہلی کا شکار ہو جاۓ ، اور شادی کے مسألہ میں کویٔی فقر سے نہ ڈرے کیونکہ خدا وند متعال نے روزی کے ایک حصے کو شادی کرنے میں رکھا ہے جب کہ پہلی نظر میں انسان اس کو نظر انداز کرتا ہے ، آپ میں سے ہر ایک جس لڑکی سے شادی کرنا چاہتا ہے اس کے دین اخلاق حسب و نسب کی طرف توجہ رکھے اور زیبایٔی ، ظاہر اور اس جیسے مسایٔل  کو اہمیت دینے میں زیادہ روی سے پرہیز کریں، کیونکہ یہ موارد فریب دہندہ ہیں اور زندگی کے سخت ایام میں ان چیزوں کی حقیقت سامنے آتی ہے، حدیث میں آیا ہے کہ صرف خوب صورتی کی وجہ سے کسی  لڑکی سے شادی کرنے سے پرہیز کریں ، اور یہ جان لیں کہ اگر کویٔی کسی لڑکی سے اس کے دین اور اخلاق کی بنیاد پر شادی کرے خدا اس میں برکت قرار دیگا۔    

لڑکیاں اور ان کے سرپرست ہوشیار رہیں کہ کام اور پیشے کو اشتراکی زندگی تشکیل دینے پر ترجیح نہ دیں، کیونکہ شادی زندگی کی مہم سنتوں میں سے ہے ، لیکن کام اور پیشہ مستحبات سے شباہت رکھتا ہے اور مددگار ہے، اور سنت مأکد کو ان امور کیلیٔے ترک کرنا حکمت سے دور ہے اور جو آغاز جوانی میں اس نقطہ سے غفلت کرے جلد ہی پشیمان ہو جاۓ گا، جب کہ اس کی پشیمانی اس کو فایٔدہ نہیں پہونچاۓ گی ، زندگی کا تجربہ اس مطلب پر گواہ ہے۔ 

اور لڑکیوں کے سرپرست کیلیٔے جایز نہیں ہے کہ ان کی شادی سے خودداری کریں ، یا آداب اور رسوم کی وجہ سے کہ جس کو خدا وند نے واجب نہیں کیا ہے شادی کیلیٔے رکاوٹ ایجاد کریں ، مثل مہریہ کا زیادہ قرار دینا ، یا چچا زاد بھایٔی یا سادات کیلیٔے منتظر رہنا،  کیونکہ اس کام میں بھت سے بڑے نقصانات ہیں جس سے آپ بے اطلاع ہیں ، اور یہ جان لیں خداوند متعال نے باپ یا داد کی ولایت کو لڑکیوں پر قرار نہیں دیا ہے مگر یہ کہ ان کی مصلحت اندیشی اور ان کی خوشبختی کیلیٔے کوشا رہیں ، اور جو بھی کسی لڑکی کی شادی میں رکاوٹ ایجاد کرے جب کہ اس لڑکی کی مصلحت نہ ہو تو مرتکب گناہ ہوا ہے ، اور یہ گناہ اس وقت تک جب تک اس کے اس کام کے برے اثرات رہیں گے دوام رکھتا ہے ، اور اس کام سے جہنم کے دروازوں میں سے ایک دروازہ اپنے لیٔے کھول دیا ہے۔  

۶۔ کار خیر اور لوگوں کو فایٔدہ پہونچانے کیلیٔے کوشش کرنا اور ایسے کام جس کا فایٔدہ عام افراد تک پہونچے مخصوصا وہ امور جو یتیموں، بیواؤں اور محروموں سے ارتباط رکھتے ہیں:

کیونکہ یہ کام ایمان میں اضافہ اور تہذیب نفس کا باعث ہے اور ان نعمتوں اور نیکیوں کی زکات ہے جو انسان کو دی گیٔی ہیں، اور ان کاموں میں فضیلت کی بنیاد ڈالنا، نیک کام اور      پرہیز گاری میں دوسروں کی مدد کرنا، بغیر کلام کے امر بالمعروف اور نہی از منکر بجا لانا، حفظ نظام میں مسؤلیں کی مدد کرنا، اور عمومی منفعتوں کی رعایت کرنا قرار دیا گیا ہے ، اور یہ امور جامعہ کی بہبودی اور فلاح ، اس دنیا کی برکت اور ذخیرہ آخرت کے باعث ہیں، اور خدا وند متعال ہم پیمان اور متحد  جامعہ کو دوست رکھتا ہے،ایسا جامعہ جس کے افراد اپنے بھاییؤں اور ہم نوع افراد کی مشکلات کو اہمیت دیتے ہیں اور وہ خوبی جو اپنے لیٔے چاہتے ہیں دوسروں کیلیٔے بھی چاہتے ہیں۔

 خداوند متعال فرماتا ہے: ((وَلَوْ أَنَّ أَهْلَ الْقُرَى آمَنُواْ وَاتَّقَواْ لَفَتَحْنَا عَلَيْهِم بَرَكَاتٍ مِّنَ السَّمَاءِ والارض)) اگر شہروں کے افراد ایمان لایں اور تقوی اختیار کریں تو ہم حتما  آسمان اور زمین کی برکتیں ان پر نازل کرینگے۔ اور فرماتا ہے : ((إِنَّ اللَّهَ لا يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّى يُغَيِّرُوا مَا بِأَنفُسِهِمْ )) ((خدا کسی قوم کی حالت کو نہیں بدلتا جب تک وہ خود اپنی حالت نہ بدلیں))۔

پیغمبر اکرم ( صلی اللہ علیہ و آلہ ) نے فرمایا: (لا يؤمن أحدكم حتّى يحبّ لأخيه ما يحبّ لنفسه ويكره لأخيه ما يكره لنفسه) ۔ ((آپ میں سے ہر ایک کامل مومن نہیں بن سکتا جب تک کہ جو چیز اپنے لیٔے پسند کرتا ہے اپنے برادر مومن کیلیٔے بھی پسند کرے، اور جو چیز اپنے لیٔے ناپسند کرتا ہے اپنے برادر مومن کیلیٔے بھی نا پسند  کرے))اور فرمایا: (من سنّ سنّہ حسنہ فله اجرها و اجر من عمل بها) ((اگر کویٔی کسی نیک سنت کی بنیاد ڈالے تو اس کے کام کا اجر اورجو اس پر عمل کرے اس کا اجر بھی اس کیلیٔے ہے))۔

 ۷۔ وہ افراد جو دوسروں کے امور کے متولی ہیں اپنی مسؤلیت کو خواہ گھر کے مسایٔل ہوں یا جامعہ کے صحیح طور پے انجام دیں، پس  ہر والد اپنے بچوں کی اور ہر شوہر اپنی بیوی کی سرپرستی صحیح طور  پے انجام دے، اور حکمت کو رعایت کرتے ہوۓ  فیملی اور جامعہ کی محافظت کیلیٔے تندرفتاری اور سنگدلی سے پرہیز کریں یہاں تک کہ ان موارد میں جہاں پر سختی سے پیش آنا ضروری ہو، کیونکہ سختی جسمی اذیت پہونچانے یا نا زیبا الفاظ استعمال کرنے پر منحصر نہیں ہے، بلکہ دوسرے تربیتی ابزار اور طریقے بھی موجود ہیں کہ اگر کویی جستجو کرے اور اہل فن اور ماہر افراد سے مشورت کرے تو اسے معلوم ہو جاۓ گا، بلکہ تند رفتاری اکثر اوقات برعکس نتیجہ دیتی ہے، کیونکہ وہ صفت جس کی اصلاح کرنا چاہتا ہے جڑ پکڑ لیتی ہے اور سامنے والے کی شخصیت پامال ہوتی ہے، اورایسی سختی میں جو ظلم کا باعث ہو اور کسی غلطی کی اصلاح دوسری غلطی سے ہورہی ہو، خیر و برکت نہیں ہے۔

 اور جو شخص جامعہ کی کسی مسؤلیت کا عھدے دار ہے اسے چاہیٔے کہ اس کو اہمیت دے اور لوگوں کا خیر خواہ ہو، اور ان وظایٔف کے انجام دینے میں جو لوگوں کی نظر سے پوشیدہ ہیں خیانت نکرے کہ خدا وند ان کا سرپست اور ان کے امور پر نظارت رکھنے والا ہے ، اور قیامت کے دن اس سے بازخواست کرے گا، پس لوگوں کےمال کو ناجایز جگہوں پر خرچ نہ کرے، اور کویٔی ایسا ڈیسیزن نہ لے جو لوگوں کی خیرخواہی کے خلاف  ہو، اور اپنی موقعیت سے سوء استفادہ کرتے ہوۓ گروہ اور پارٹی نہ بناۓ تاکہ ایک دوسرے کی غلط رویوں کو چھپایں اور غیر شرعی منفعتوں اور شبہہ ناک اموال کا آپس میں لین دین کریں اور دوسروں کو ایسے منصب سے جس کے مستحق ہیں ہٹایں یا ایسی خدمات جس کے دریافت کرنے کے وہ لایٔق ہیں ان کے لیٔے رکاوٹ بنیں، بلکہ اس کا کام سبھی افراد کیلیٔے ایک طرح ہونا چاہیٔے اور اپنے منصب کو شخصی حقوق کو ادا کرنے کا ذریعہ نہ بناۓ جیسے رشتے داری یا دوسروں کے احسان کا بدلہ وغیرہ کیونکہ حقِ عام  کے ذریعے شخصی حقوق کا ادا کرنا ظلم اور تباہی ہے، پس اگر آپ کو یہ اختیار دیا گیا ہو کہ کسی کو انتخاب کریں تو ایسے شخص کا انتخاب کریں جو قدرت اور نفوذ نہیں رکھتا ہو اور کویٔی مقام اور منصب اس کی پشت پناہی نہیں کرتا ہو اور اس کا خدا وند کے علاوہ کویٔی اور اپنا حق حاصل کرنے کیلیٔے نہ ہو۔

اور آپ میں سے کویٔی بھی اپنے کام کو موجہ کرنے کیلیٔے دین یا مذہب کو وسیلہ نہ بناۓ، کیونکہ دین اور مسالک حقہ، اصول اور مقدمات حقہ پر استوار ہیں جس میں سے عدل، احسان اور امانت داری وغیرہ ہے۔

خدا وند متعال فرماتا ہے 🙁 لَقَدْ أَرْسَلْنَا رُسُلَنَا بِالْبَيِّنَاتِ وَأَنْزَلْنَا مَعَهُمُ الْكِتَابَ وَالْمِيزَانَ لِيَقُومَ النَّاسُ بِالْقِسْطِ)۔((ہم نے اپنے پیغمبروں کو آشکار دلیلوں کے ساتھ بھیجا اور انکے ساتھ کتاب اور میزان نازل کیا تاکہ لوگ عدالت سے پیش آیں )) اور امیر المومنین علیہ السلام فرماتے ہیں : (إنّي سمعت رسول الله (صلّى الله عليه وآله) يقول في غير موطن: لنْ تُقَدَّسَ أُمَّةٌ لا يُؤْخَذُ لِلضَّعِيفِ فِيهَا حَقَّهُ مِنَ الْقَوِيِّ غَيْرَ مُتَعْتِعٍ)۔ ((میں نے مختلف مقام پر پیغمبر خدا (صلی اللہ علیہ و آلہ)  سے سنا کہ آپ نے فرمایا : کوییٔ بھی امت پاک اور منزہ نہیں ہو سکتی جب تک کہ کمزور اور ناتوان افراد کا حق قدرت مند لوگوں سے بغیر کسی خوف اور واہمے کے واپس نہ لیا جاۓ))، اور جو بھی اپنے کام کی بنیاد ان موارد کے علاوہ کسی اور چیز پے قرار دے در حقیقت اپنے نفس کو پوچ اور جھوٹی امیدوں کے ذریعے دھوکا دیا ہے، لوگوں میں عدالت کہ پیشوا، جیسے پیغمبر اکرم ( صلی اللہ علیہ و آلہ) امام علی (علیہ السلام ) اور امام حسین شہید (علیہ السلام) سے سب زیادہ نزدیک وہ افراد ہیں جو دوسروں کے بہ نسبت زیادہ انکی باتوں اور سیرت پرعمل کرتے ہوں، اور جو شخص لوگوں کے امور کا عھدے دار ہے  اسے چاہیٔے کہ امام علی (علیہ السلام) کا نامہ۔ جو آپ نے مالک اشتر کو لکھا تھا۔ کے مطالعہ کا پابند ہو، کیونکہ اس نامہ میں اصول اور مقدمات عدالت اور امانت داری کی توصیف کی گیٔی ہے، جو مسؤلین اور ان لوگوں کیلیٔے جن کا عھدہ چھوٹا ہے، مفید ہے اور جتنی ہی انسان کی مسؤلیت وسیع ہو اتنا ہی ان دستورات کی رعایت کرنا لازم اور ضروری ہے۔

 ۸۔ انسان کا اپنے اندر تمام مراحل زندگی اور مختلف احوال میں انگیزہ تحصیل علم، حکمت اور معرفت اضافہ  کرنے کی ہمت رکھنا:

 پس تمام کام اور خصلتوں میں اس کے آثارکے بارے میں سوچیں، اور اس کے اطراف میں جو پیش آرہا ہے اس کے نتایٔج کو دیکھیں، تاکہ روز بروز انسان کی معرفت، تجربہ اور کمال میں اضافہ ہوتا رہے، کیونکہ یہ زندگی مختلف ابعاد سے انسان کیلیٔے ایک مدرسہ ہے جس کے اندر عمق پایا جاتا ہے، اور کبھی بھی انسان اپنی زندگی میں تحصیل علم ، معرفت اور مھارت سے بے نیاز نہیں ہو سکتا، ہر حادثہ اور روداد میں انسان کیلیٔے عبرت، اور ہر واقعے میں قابل تأمل پیغام اور نقطہ پایا جاتا ہے، اورجو شخص غور کرے اس کیلیٔے واضح ہوگا کہ وہ واقعہ سنت الھی میں ریشہ رکھتا ہے، اور اسکے لیٔے نصیحت اور موعظہ آور ہے، پس انسان اپنی زندگی میں کبھی بھی تحصیل و معرفت سے بے نیاز نہین ہے یہاں تک کہ اپنے خدا وند سے ملاقات کرے اور جتنا انسان دقت نظر رکھتا ہوگا یہ امور حقایق کی شناخت میں بہت سے تجربوں اور خطاؤں سے اس کو بے نیاز کریں گے، خدا وند متعال فرماتا ہے:( وَمَن يُؤْتَ الحِكْمَةَ فَقَدْ أُوتِيَ خَيْراً كَثِيراً)۔((جس کو حکمت دی گیٔی وہ خیر کثیر سے بہرہ مند ہوا)) اور اپنے پیغمبر(صلی اللہ علیہ و آلہ) سے فرمایا: (وقل ربّ زدني علماً)۔(( کہو پروردگار میرے علم میں اضافہ کر))۔

 اور سزاوار ہے کہ انسان تین کتابوں سے مأنوس ہو اور  ان میں غور و فکر کے ذریعے توشہ حاصل کرے :

 اول ۔  قرآن کریم: ان میں پہلی اور سب سے برتر قرآن کریم ہے جو خدا وند متعال کا اپنی مخلوق کیلیٔے آخری پیغام ہے اور اس پیغام کو اس لیٔے بھیجا ہے تاکہ عقل و حکمت کے خزانوں کو ظاھر کرے اور حکمت اور دانایٔی کے چشموں کو جاری کرے اور اس کے ذریعے دلوں کی قساوت کو نرم کرے اور حوادث کو  بطور مثال اس میں بیان کیا ہے، پس لازم ہے کہ انسان اس کتاب کی تلاوت سے دریغ نہ کرے اور تلاوت کے وقت اپنے کو یہ احساس دلاۓ کے خدا وند اس سے خطاب کر رہا ہے اور وہ سن رہا ہے کیونکہ کہ خدا وند نے اپنی کتاب کو تمام اہل جہان کیلیٔے پیغام کے طور پر نازل کیا ہے۔

 دوم ۔  نہج البلاغہ : یہ کتاب کلی طور پرقرآن کے مضامین اور نشانیوں کو بلیغ شیوں سے بیان کرنے والی ہے، جو انسان کو تدبیر، تفکر، موعظہ کے قبول کرنے اور حکمت کیطرف تشویق کرتی ہے، شایستہ نہیں ہیکہ انسان فراغت کے اوقات میں اسکا مطالعہ نہ کرے، اور اپنے کو یہ احساس دلاۓ کہ وہ ان افراد میں سے ہے جن کے لیٔے امیر المؤمنین (علیہ السلام) خطبہ پڑھتے تھے جیسا کہ اسکی آرزو یہی ہے، اور اسی طرح آپ کے نامہ کے بنسبت جو آپ نے اپنے فرزند امام حسن (علیہ السلام) کیلیٔے لکھا، اہتمام رکھے، کیونکہ یہ نامہ بھی مقصد میں مشابہ ہے۔

  سوم ۔ صحیفہ سجادیہ: اس کتاب میں قرآن کے مضامیں کو بلیغ شیوں سے دعا کی شکل بیان کیا گیا ہے اور یہ کتاب انسان کو سکھاتی ہے کہ کون سے راستے، نگرانیاں، نظریے اور آرزو کا انسان انتخاب کرے، اور اسی طرح نفس کا  کس طرح محاسبہ  کریں تاکہ انتقاد پذیر ہو اس کو بھی بیان کرتی ہے،اور نفس کے پنہان زاویوں اور اس کے اسرار کو کشف کرتی ہے بالخصوص اس کتاب کی دعاۓ مکارم الاخلاق۔

       پس یہ آٹھ نصیحتیں ہیں جو  استحکام زندگی کے اصول ہیں، البتہ یہ صرف ایک یادآوری ہے، کیونکہ نور حق، روشن حقیقیت ، صفای فطرت، گواہی عقل اور زندگی کے تجربون کو ان نصیحتوں میں دیکھ سکتا ہے،نیز خدا کے پیغام اور اہل بصیرت افراد کی نصحتوں نے بھی اس کو اس مطلب سے آگاہ کر رکھا تھا، اس بنا پر شایستہ ہے کہ ہر انسان ان نصیحتوں پر عمل کرے یا اس پر عمل کرنے کیلیٔے کوشا رہے، مخصوصا وہ جوانان جنکی اوج جوانی اور جسمی اور روحی طاقت کا وقت ہے، جو کہ در حقیقت انسان کی زندگی کا سرمایہ ہے، پس اگر اس سرمایٔے کا کچھ حصہ یا اکثر حصہ ہاتھ سے چلا جاۓ، تو یہ جان لیں کہ اس سے تھوڑا فایٔدہ حاصل کرنا بھی بھت سے فایدے چھوڑ دینے سے بہتر ہے کیونکہ تھوڑا بھی حاصل کرنا تمام کے ترک کرنے سے بہتر ہے، خدا وند سبحان فرماتا ہے: (فَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقالَ ذَرَّةٍ خَيْراً يَرَهُ، وَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ) ۔ ((پس جس نے بھی ذرہ برابر نیکی کی ہوگی وہ اس کو دیکھے گا اور اور جس نے بھی ذرہ برابر برایٔی کی ہوگی  وہ اس کو دیکھے گا))۔

خداوند متعال سے درخواست کرتا ہوں کہ آپ حضرات کو ہر اس چیز کی جو دنیا اور آخرت میں سعادت اور استقامت کا باعث ہے توفیق دے،  بیشک وہی توفیق دینے والا ہے۔

۲۸ربیع‌الاول ۱۴۳۷ هجری قمری


Recent Posts

Leave a Comment

Contact Us

We're not around right now. But you can send us an email and we'll get back to you, asap.

Not readable? Change text. captcha txt